Ahmed Faraz Love Poetry

Pages: 1 2 3 4 5 6 7 8 9 10 11 12

  جس طرح بادل کا سایہ پیاس بھڑکاتا رھے میں نے یہ عالم بھی دیکھا ھے تری تصویر کا

عشق اک کوہ گراں تھا پہلے اب محبت کے وہ آداب کہاں

Ishq ik koh garan tha pehly,
ab mohobat k wo adab kahan


  اسی خیال سے ہر زخم اپنے دل پہ سہا کہ تجھ کو گردشِ ایام کی ہوا نہ لگے

  جب تلک دور ھے تو تیری پرستش کر لیں ھم جسے چھو نہ سکیں اس کو خدا کہتے ھیں

  جانے والے کو نہ روکو کہ بھرم رہ جائے تم پکارو بھی تو کب اسکو ٹھہر جانا ھے

Janay waly ko na roko k bharam reh jaye ga,
tum pukaro bhi to kab us ko thehr jana hy


  جس کے چہرے پہ مری آنکھیں ھیں وہ مجھے طعنِ کم نگاھی دے