Ahmed Faraz Love Poetry

Pages: 1 2 3 4 5 6 7 8 9 10 11 12

  وہ جس گھمنڈ سے بچھڑا گلہ اسی کا ھے کہ ساری بات محبت میں رکھ رکھاؤ کی تھی

  وفا کے باب میں الزامِ عاشقی نہ لیا کہ تری بات بھی کی تیرا نام بھی نہ لیا

Wafa k bab main ilzam e ashqi na liya,
k tery bat bhi ki tera nam bhi na liya


  اسے فراز اگر دکھ نہ تھا بچھڑنے کا تو کیوں وہ دور تلک دیکھتا رہا مجھ کو

  اس کی وہ جانے اسے پاسِ وفا تھا کہ نہ تھا تم فراز اپنی طرف سے تو نبھاتے جاتے

Us ki wo janay usay pas e wafa tha k na tha,
tum faraz apni taraf say to nibhatay jaty


  تو سمندر ھے تو پھر اپنی سخاوت بھی دکھا کیا ضروری ھے کہ میں پیاس کا دامن کھولوں

  پہلے سے مراسم نہ سہی پھر بھی کبھی تو رسم و رہِ دنیا ہی نبھانے کے لئے آ

Pehlay say marasim na sahi phir bhi kabhi to,
rasm o rah e dunia he nibhanay k liye a


  سلسلے توڑ گیا وہ سبھی جاتے جاتے ورنہ اتنے تو مراسم تھے کہ آتے جاتے