Ahmed Faraz Love Poetry

Pages: 1 2 3 4 5 6 7 8 9 10 11 12

  بظاہر ایک ھی شب ھے فراقِ یار مگر کوئی گزارنے بیٹھے تو عمر ساری لگے

  اے رگِ جاں کے مکیں تو بھی زرا غور سے سن دل کی دھڑکن ترے قدموں کی صدا لگتی ھے

Aye rag e jan kay maken to bhi zra ghor say sun,
dil ki dharkan tery qadmon ki sada lagty hy


  ایک دنیا منتظر ھے اور تیری بزم میں اس طرح بیٹھے ھیں ھم جیسے کہیں جانا نہیں

  آج کیا دیکھ کے بھر آئی ھیں تیری آنکھیں ھم پہ اے دوست یہ ساعت تو ھمیشہ گزری

Aj kya dekh kay bhar aye hain ankhen tery ankhen,
ham pay aye dost ye saat to hamesha guzry


  آنکھ میں آنسو جڑے تھے پر صدا تجھ کو نہ دی اس توقع پر کہ شاید تو پلٹ کر دیکھتا

  آنکھوں کی تسلی نہیں ھوتی تو نہ ھووے ھم خوش ھیں کوئی شکل تو دیدار کی نکلی

Ankhon ki tasaly nahi hoty to na howy,
ham khush hain koi shakal to deedar ki nikly


  اپنا یہ حال کہ جی ھار چکے لٹ بھی چکے اور محبت وہی انداز پرانے مانگے