Ahmed Faraz Love Poetry

Pages: 1 2 3 4 5 6 7 8 9 10 11 12

  بظاہر ایک ھی شب ھے فراقِ یار مگر کوئی گزارنے بیٹھے تو عمر ساری لگے

Bazahir aik he shab hy faraq e yar magar,
koi guzarnay bethy to umar sary lagy

  بدلا نہ میرے بعد بھی موضوع گفتگو میں جا چکا ھوں پھر بھی تری محفلوں میں ھوں

Badla na mery bad bhi mozoo guftagoo,
main ja chuka hu phir bhi tery mehfilon main hu

  اے رگِ جاں کے مکیں تو بھی زرا غور سے سن دل کی دھڑکن ترے قدموں کی صدا لگتی ھے

Aye rag e jan kay maken to bhi zra ghor say sun,
dil ki dharkan tery qadmon ki sada lagty hy

  ایک دنیا منتظر ھے اور تیری بزم میں اس طرح بیٹھے ھیں ھم جیسے کہیں جانا نہیں

Aik dunya muntazir hy aur tery bazm main,
is trha bethy hain jesy kahi jana nahi

  آج کیا دیکھ کے بھر آئی ھیں تیری آنکھیں ھم پہ اے دوست یہ ساعت تو ھمیشہ گزری

Aj kya dekh kay bhar aye hain ankhen tery ankhen,
ham pay aye dost ye saat to hamesha guzry

  آنکھ میں آنسو جڑے تھے پر صدا تجھ کو نہ دی اس توقع پر کہ شاید تو پلٹ کر دیکھتا

Ankh main ansoo juray thay par sada tuj ko na dy,
is tawaqa par k shayed tu palat kar dekhta

  آنکھوں کی تسلی نہیں ھوتی تو نہ ھووے ھم خوش ھیں کوئی شکل تو دیدار کی نکلی

Ankhon ki tasaly nahi hoty to na howy,
ham khush hain koi shakal to deedar ki nikly

  اپنا یہ حال کہ جی ھار چکے لٹ بھی چکے اور محبت وہی انداز پرانے مانگے

Apna ye hal k g har chukay lut bhi chukay, aur mohabat wahi andaz purany mangy

Leave a Reply